ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کاطریقہ اور احتیاطی تدابیر

 

ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کاطریقہ اور احتیاطی تدابیر

ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کاطریقہ اور احتیاطی تدابیر

گرمی کا موسم ہے اور اس بار محکمہ موسمیات کے مطابق موسمیاتی تبدیلیوں کے ردعمل میں دنیا بھر میں کہیں شدید گرمی تو کہیں شدید سردی  جیسی صورتحال ہے۔

ماہرینِ صحت کے مطابق سورج کی گرم دھوپ اور تپش میں کام کرنے یا گھومنے سے انسانی جسم کا درجۂ حرارت بڑھ جاتا ہے اور ایسے میں ہیٹ اسٹروک سے متاثر ہونے کے امکانات بھی بڑھ جاتے ہیں۔

بچاؤکاطریقہ اور احتیاطی تدابیر

ہیٹ اسٹروک کی علامات

ماہرین کے مطابق ہیٹ اسٹروک کا جسم پر سب سے خطرناک اثر یہ ہوتا ہے کہ پسینہ زیادہ آنے کے بعد پانی کی کمی کی وجہ سے جسم حد سے زیادہ گرم اور خشک ہو جاتا ہے اور کسی صورت ٹھنڈا نہیں ہوتا۔ ہیٹ اسٹروک عام طور پر گرم ہواؤں اور سورج کی تپش کی وجہ سے لاحق ہوتا ہے۔

ہیٹ اسٹروک اور لو لگنے کی علامات میں سر میں دردشروع ہوجانا، چکر آنا، شدید پیاس کا لگنا، جسمانی کمزوری، پھٹوں میں کھنچاؤ، اچانک تیز بخار اور بے ہوشی کی کیفیت شامل ہیں۔

بچاؤکیلئے احتیاطی تدابیر

ویسے تو گھر میں رہنے سے اس سے بچا جاسکتا ہے لیکن اگر آپ کسی ایسے پیشے سے وابستہ ہیں جس میں آپ کا سورج کی تپش میں کام کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں تو اس صورت میں ابتدائی طبی امداد کے لیے جسم پر ٹھنڈی پٹیاں اور ٹھنڈے پانی کا اسپرے کریں

مریض کو پانی اور دیگر ٹھنڈے مشروبات پلائے جائیں، طبی امداد میں تاخیر سے گریز کریں کیوں کہ تاخیرجان لیوا بھی ثابت ہو سکتی ہے۔

ہیٹ اسٹروک سے بچاؤ کے لیے طبی ماہرین کے مطابق دن کے گرم ترین اوقات 11 بجے سے سہ پہر 3 بجے کے دوران گھر میں رہیں اورباہر جانے سے گریز کریں۔

طبی ماہرین کی جانب سے دل اور سانس کی بیماری میں مبتلا افراد کو ٹھنڈے ماحول میں رہنے کی تجویز بھی کی گئی ہے۔

ہیٹ اسٹروک کی احتیاطی تدابیر میں گرم موسم میں غیر معیاری غذا سے اجتناب کرنا بھی شامل ہے۔

 گرم موسم میں پانی اور تازہ مشروبات کا استعمال بڑھادیا جائے۔

Post a Comment

جدید تر اس سے پرانی